صرف 27سال کی عمر میں کینسر کا شکار ہو کر فوت ہونے والی لڑکی کا دنیا والوں کے نام آخری خط انٹرنیٹ پر آگ کی طرح پھیل گیا، اس میں کیا لکھا؟ ایسی بات جو ہر شخص کو ضرور پڑھ لینی چاہی

0 323

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) چند روز قبل برطانیہ میں ایک نوجوان لڑکی کینسر کے باعث انتقال کر گئی۔ موت کے بعد اس کا دنیا کے نام ایک کھلا خط منظرعام پر آیا جو جس نے بھی پڑھا اس کی آنکھیں نم ہو گئیں۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 27سالہ ہولی بچر نے اپنے گھروالوں کو ہدایت کی تھی کہ یہ خط اس کی موت کے بعد منظرعام پر لایا جائے، چنانچہ گھروالوں نے گزشتہ روز یہ خط انٹرنیٹ پر عام کر دیا۔

ہولی نے خط میں لکھا ہے کہ ”یہی انسان کی زندگی ہے، یہ نازک ہے، یہ قیمتی ہے اور اس کے متعلق پیش گوئی ممکن نہیں۔ اس کا ہر دن ایک تحفہ ہے۔ زندگی کے دن گزرتے جاتے ہیں اور آپ کو توقع ہوتی ہے کہ یہ اسی طرح آتے رہیں گے لیکن ایک روز غیرمتوقع طور پر آپ کو یہ تحفہ نہیں ملتا۔ میں اس وقت 27سال کی ہوں اور میں ابھی مرنا نہیں چاہتی۔ میں زندگی سے پیار کرتی ہوں۔“

ہولی نے مزید لکھا کہ ”جب ہم زندگی پر بحیثیت مجموعی نگاہ دوڑاتے ہیں تو یہ بہت چھوٹی معلوم ہوتی ہے۔ آپ ایک گہری سانس لیجیے، دیکھیے کہ آسمان کتنا نیلا اور درخت کتنے سرسبزوشاداب ہیں اور سوچیے کہ آپ کتنے خوش قسمت ہیں کہ آپ سانس لے رہے ہیں۔ آپ کو ایک سانس ہی دنیا کی سب سے بڑی خوش قسمتی محسوس ہو گی۔زندگی جینے کے لیے جتنا بھی وقت آپ کو ملا ہے، اس کی قدر کیجیے، اپنا وقت اپنے دوستوں اور خاندان کے ساتھ شیئر کیجیے، نئے ملبوسات اور ایسی دیگر مادی چیزوں پر رقم خرچ کرنے کی بجائے تجربات پر خرچ کیجیے۔ہمیشہ لمحہ¿ حال میںجینا اور اس سے لطف اندوز ہونا سیکھیے۔ مناظر کو اپنے فون کی سکرین کے ذریعے محفوظ کرنے کی بجائے اپنی آنکھوں کے ذریعے دماغ میں محفوظ کیجیے۔ ہمیں زندگی موبائل فون کی سکرین کے ذریعے نہیں جینی چاہیے۔ہر وقت تصاویر بنانے سے گریز کیجیے۔ اپنے اردگرد کے لوگوں کے ساتھ حال کے لمحات سے لطف اندوز ہونے کا نام زندگی ہے۔ اس کے علاوہ زندہ رہنے کے لیے کام کرو، نہ کہ کام کرنے کے لیے زندہ رہو۔“
(دھرتی نیوز)

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

Comments

Loading...